The Pakistan Post
Daily News Publishing Portal

پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس: اینٹی منی لانڈرنگ، اسلام آباد وقف املاک سمیت پانچ بل منظور … پارلمینٹ کے مشترکہ اجلاس میں اینٹی منی لانڈرنگ ترمیمی بل 2020 اور اسلام آباد وقف … مزید

12

پارلمینٹ کے مشترکہ اجلاس میں اینٹی منی لانڈرنگ ترمیمی بل 2020 اور اسلام آباد وقف املاک بل سمیت پانچ بل ایوان سے منظور کرلیے گئے۔

Hassan Shabbir حسن شبیر
بدھ ستمبر
20:07

اسلام آباد (اردو پوائنٹ-اخبارتازہ ترین۔ 16 ستمبر2020ء)اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کی زیر صدارت ہونے والے پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں اینٹی منی لانڈرنگ اور ا سلام آباد وقف املاک بل سمیت پانچ بلز کے حق میں دو سو اور مخالفت میں ایک سو نوے ووٹ پڑے۔میڈیا رپورٹس کے مطابق اجلاس میں اینٹی منی لانڈرنگ ترمیمی بل 2020 کثرت رائے سے منظور کرلیا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق انسداددہشتگردی تیسراترمیمی بل 2020 بھی کثرت رائے سے منظور ہوگیا۔مشترکہ اجلاس میں اسلام آباد وقف املاک بل 2020، سروے اینڈمیپنگ ترمیمی بل 2020، اسلام آبادہائی کورٹ ترمیمی بل کثرت رائے سے منظور کرلیا گیا۔مشیرپارلیمانی اموربابراعوان نے بلز ایوان میں پیش کیے،مشترکہ اجلاس کے دوران پاکستان میڈیکل کمیشن ایکٹ میں ترمیم کا بل 2020 ایوان میں پیش کیا گیا۔

(جاری ہے)

ایف اے ٹی ایف سے متعلق اہم قانون سازی سمیت دیگر بلز بھی مشرکہ اجلاس کے ایجنڈے کا حصہ ہیں۔

اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کی زیر صدارت ہونے والے مشترکہ اجلاس میں وزیراعظم عمران خان، قائد حزب اختلاف شہباز شریف اور چیئرمین پیپلز پارٹی سمیت حکومتی اور اپوزیشن کے ارکان اسمبلی موجود ہیں۔وزیر اعظم کے مشیر بابراعوان نے اسلام آباد وقف املاک بل 2020 مشترکہ اجلاس میں پیش کیا جس پر پیپلز پارٹی کے سینٹر رضاربانی نے مشترکہ اجلاس اعتراض اٹھاتے ہوئے کہا کہ بابر اعوان وزیراعظم کے مشیر ہیں، وزیر نہیں اس لیے وہ تحریک نہیں پیش کر سکتے۔انہوں نے کہا کہ پارلیمانی امور کے انچارج عمران خان خود ہیں ۔ عدالتی فیصلے کے مطابق مشیر اور معاون خصوصی وزیراعظم کو صرف مشورے دے سکتے ہیں ۔ان کا کہنا تھا کہ اسلام آباد ہائی کورٹ کے فیصلےمیں واضح لکھا ہےکہ مشیرپارلیمنٹ میں بیٹھ سکتےہیں لیکن ووٹ نہیں ڈال سکتے ۔جس پر وزیر قانون فروغ نسیم نے جواب دیا کہ مشیر پارلیمنٹ میں صرف ووٹ نہیں دے سکتے ، کارروائی میں حصہ لے سکتے ہیں، رضا ربانی نے جو بات کی یہ فیصلے میں نہیں لکھی۔اس موقع پر اپوزیشن نے بل کی تحریک پر رائے شماری کے لیے احتجاج کیا اور نعرے بازی کی اور تمام اراکین نشستوں پر کھڑے ہو گئے ۔اسپیکر نے بل کے حق اور مخالفت میں ووٹ دینے والے اراکین کی گنتی کی ہدایت کی، جس کے بعد بل کی شق وار منظوری کا عمل شروع ہوا تو اپوزیشن نے بل کی شق وار منظوری کو بھی چیلنج کر دیا۔جماعت اسلامی کے سینیٹر مشتاق کی ترمیم پر رائے شماری کو اپوزیشن نے چیلنج کیا، انہوں نے مؤقف اپنایا کہ ہماری ترمیم مسترد نہیں منظور ہوئی ۔بعد ازاں پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں مشیر پارلیمانی امور ڈاکٹر بابر اعوان کی جانب سے پیش کیا گیا اینٹی منی لانڈرنگ دوسری ترمیم 2020 منظور کر لیا گیا ہے۔اس سے قبل وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت تحریک انصاف اور اتحادیوں کی پارلیمانی پارٹی کا اجلاس ہوا جس میں ایف اے ٹی ایف سے متعلقہ قانون سازی کیلئے لائحہ عمل پر مشاورت کی گئی۔ذرائع کے مطابق وزیراعظم نے کہا کہ تمام ارکان مشترکہ اجلاس میں اپنی حاضری یقینی بنائیں، فیٹف بلز ہماری ذات کے لیے نہیں ملک کے لیے ہیں۔انہوں نے کہا کہ کوشش ہے آج مشترکہ اجلاس سے یہ بلز منظور کرائیں گے۔ذرائع کے مطابق اجلاس کے دوران ارکان نے اپنے حلقوں کے مسائل پر گفتگو کی اور وزیراعظم سے حلقوں کے مسائل حل کرنے میں تعاوَن کا مطالبہ کیا۔وزیراعظم نے انہیں یقین دہانی کراتے ہوئے کہا کہ عوامی مسائل سے آگاہ ہوں انہیں ترجیحی بنیادوں پر حل کریں گے۔خیال رہے کہ پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں اپوزیشن اراکین نے ایجنڈے کی کاپیاں بھی پھاڑ دیں، کاپیاں پھاڑ کراسپیکر کی طرف اچھال دیں اور زبردست ہنگامہ آرائی کے بعد ایوان سے واک آوٹ کیا اپوزیشن ارکان نے اسپیکر اسد قیصر کے ڈائس کے سامنے احتجاج کیا۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More