The Pakistan Post
Daily News Publishing Portal

وزیراعظم بارشوں سے سندھ میں ہونے والی تباہی کا جائزہ لینے کے بجائے گورنر ہاؤس کا چکر لگاکر واپس چلے گئے جو افسوسناک بات ہے،نثار کھوڑو … بلاول بھٹو زرداری نے مصیبت کی گھڑی … مزید

9

حیدرآباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین – این این آئی۔ 14 ستمبر2020ء) پیپلزپارٹی سندھ کے صدر و صوبائی مشیر نثار کھوڑو نے کہاہے کہ وزیراعظم عمران خان بارشوں سے سندھ میں ہونے والی تباہی کا جائزہ لینے کے بجائے گورنر ہاؤس کا چکر لگاکر واپس چلے گئے جو افسوسناک بات ہے، وہ اپنے حلقہ انتخاب میں بھی نہیں گئے، شہباز شریف نے کراچی آمد پر اپنے حلقہ انتخاب کا دورہ تو کیا۔

(جاری ہے)

وہ پیپلزپارٹی حیدرآباد کے صدر صغیر قریشی کی رہائشگاہ پر پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے، اس موقع پر آفتاب خانزادہ، علی محمد سہتو اور پاشا قاضی ودیگر بھی موجود تھے، نثار کھوڑو نے کہاکہ پی پی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے مصیبت کی گھڑی میں سندھ کے لوگوں کو تنہا نہیں چھوڑا پورے سندھ میں ایک ہفتہ تک دورہ رکے اپنی آنکھوں سے نقصانات کا جائزہ لیا اورثابت کیا کہ وہ ذوالفقار علی بھٹو اور بینظیر بھٹو کے حقیقی وارث ہیں اور عوام کا درد ان کے دل میں ہے ہم سندھ کے عوام کی طرف سے ان کا شکریہ ادا کرتے ہیں، انہوںنے کہاکہ وفاقی وزیر شبلی فراز نے سندھ کے حوالے سے جو زبان استعمال کی وہ انتہائی قابل مذمت اورافسوسناک ہے، وفاق کی جانب سے سندھ کے مظلوم عوام کو نظر انداز کرنے کے باوجود 70 سے 80 کروڑ روپے ریلیف کے لئے مختص کئے ہیں صدر اور وزیر اعظم سے براہ رسات مدد مانگی تھی لیکن وہ مدد کو نہیں آئے، نثار کھوڑو نے کہاکہ ہمارا مطالبہ تھا کہ آفت زدہ اضلاع میں زرعی ایمرجنسی نافذ کی جائے لیکن کوئی شنوائی نہیں ہوئی، نثار کھوڑو نے کہاکہ سندھ کی تباہ شدہ حالت کی بہتری کے لئے بلاول بھٹو زرداری نے ایک ریلیف کمیٹی قائم کی ہے جس میں فیصلہ کیا گیا کہ سندھ کے ہر ضلع میں یہ کمیٹی ریلیف کیمپ قائم کرے گی اور امداد جمع کرے گی پی پی کے تمام وزراء ، سینیٹرز، ارکان اسمبلی نے بارش سے متاثرہ لوگوں کی بحالی کے لئے ایک ماہ کی تنخواہ دینے کا اعلان کیا ہے کیمپوں میں کھانے پینے کی اشیاء کے علاوہ پینے کے پانی کی فراہمی کا انتظام بھی ہوگا تاکہ متاثرہ افراد کی جاسکے ہر ضلع میں بارش سے ہونے والے نقصانات کا جائزہ لیا جائے گا ہم سیلانی اور دیگر این جی اوز کا شکریہ ادا کرتے ہیں جنہوںنے ان حالات میں متاثرہ لوگوں کی مدد کی، انہوںنے کہاکہ یقینا کراچی ان بارشوں سے متاثر ہو اہے لیکن بات پورے سندھ کی ہونا چاہئے شہروں کے ساتھ دیہات بھی شدید متاثر ہوئے ہیں، مختلف سوالات کے جواب میں انہوںنے کہاکہ حکومت کو تمام معاملات کی خبر ہوتی ہیں فرقہ واریت اور لسانیت کی روک تھام کرنا حکومت کی ذمہ داری ہے یہ نہیں ہونا چاہئے کہ فرقہ واریت میں ملوث فرد کو باہر بھیج دیاجائے اٹھارہویں ترمیم کے تحت سندھ حکومت نے مسائل کو حل کیا ہے لیکن وفاقی کی بھی آئین کے تحت ذمہ داری ہے کہ صوبوں کی مدد کرے ایف اے ٹی ایف پر پیپلزپارٹی نے کوئی سودے بازی نہیں کی بلکہ ملک کے مفاد میں فیصلہ کیا۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More