The Pakistan Post
Daily News Publishing Portal

قومی اسمبلی نے انسداد دہشت گردی ترمیمی بل 2020 منظور کر لیا، اپوزیشن کا بل لانے کے طریقہ کارپر احتجاج … مسلح افواج یا اس کے کسی رکن کا جان بوجھ کر تمسخر اڑانے والے کو 2سال … مزید

14

مسلح افواج یا اس کے کسی رکن کا جان بوجھ کر تمسخر اڑانے والے کو 2سال تک قید اور 5 لاکھ روپے جرمانہ یا دونوں سزائیں دی جا سکیں گی

منگل ستمبر
22:25

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین – این این آئی۔ 15 ستمبر2020ء) قومی اسمبلی نے انسداد دہشت گردی ترمیمی بل 2020 منظور کر لیا،مسلح افواج یا اس کے کسی رکن کا جان بوجھ کر تمسخر اڑانے والے کو 2سال تک قید اور 5 لاکھ روپے جرمانہ یا دونوں سزائیں دی جا سکیں گی ،اپوزیشن کی طرف سے بل لانے کے طریقہ کار پر احتجاج کیا گیا۔

(جاری ہے)

منگل کو ڈپٹی سپیکر قاسم سوری کی صدارت قومی اسمبلی کا اجلاس ، انسداد دہشت گردی ایکٹ میں تیسری ترمیم کا بل اکثریت رائے سے منظور ، بل ایجنڈہ میں شامل نہیں تھا، تحریک کے ذریعے بل کو ایجنڈہ میں شامل کر لیا گیا، اپوزیشن نے ضمنی ایجنڈہ کے طور پر بل لانے پر احتجاج کیا، بل حکومتی رکن فہیم خان نے پیش کیا، منظور کئے گئے بل کے مطابق انسداد دہشت گردی ایکٹ میں ترامیم ایف اے ٹی ایف شرائط کی روشنی میں کی گئیں، ترمیمی بل میں دہشت گردوں کی مالی معاونت کی تحقیقات کی شقیں شامل کی گئی ہیں، عدالت تفتیشی افسر کو دہشت گردی کے کسی بھی واقعہ کی مالی معاونت کی تحقیقات کیلئے 60 روز دے سکے گی، دہشت گردی کے لیے سرمایہ اور دیگر سہولیات کی فراہمی اور معاونت کی چھان بین کی جائے گی، تفتیشی افسر کے پاس کمپیوٹر ضبط کرنے کا اختیار بھی ہو گا، عدالت 60 روز میں تحقیقات مکمل نہ ہونے پر مزید توسیع دے سکے گی، وفاقی حکومت نئی ترمیم کے نفاذ کے لیے قواعد بنائے گی، نئی ترامیم کا اطلاق رائج کسی بھی دوسرے قانون سے متصادم نہیں ہو گا، فوجداری قانون ترمیمی بل بھی قومی اسمبلی میں پیش، بل قائمہ کمیٹی دفاع کے چیرمین امجد علی خان نے پیش کیا، بل کے مطابق مسلح افواج یا اس کے کسی رکن کا جان بوجھ کر تمسخر اڑانا ،وقار کو گزند پہنچانا یا بدنام کرنا جرم قرار پائے گا، ایسا کرنے والے کو 2سال تک قید اور 5 لاکھ روپے جرمانہ یا دونوں سزائیں دی جا سکیں گی۔

متعلقہ عنوان :

Leave A Reply

Your email address will not be published.

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More