The Pakistan Post
Daily News Publishing Portal

سعودی حکومت نے متعدد شعبوں کے ملازمین اور طبی مسائل کے شکار افراد کو پروازوں سے سفر کی اجازت دے دی … سفارت خانوں، سرکاری و فوجی اداروں، کاروباری افراد، سکالر شپس اور … مزید

9
جدہ (اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔14 ستمبر2020ء) سعودی عرب نے خلیجی ممالک کے باشندوں کو کل بروز منگل سے سعودی عرب میں آنے کی اجازت دے دی ہے۔ حکومتی عہدیداروں کا کہنا ہے کہ سعودی عرب میں بیرون ملک سے شہریوں کی آمد اور واپسی مرحلہ وار شروع کی جائے گی۔العربیہ نیوز کے مطابق اس کے علاوہ بہت سے شعبوں کے ملازمین کو بھی باہر جانے کی اجازت ہو گی۔ سعودی وزارت داخلہ کے مطابق ان افراد کو جانے کی اجازت ہو گی:

۔ سرکاری فرائض پر مامور حکومت کے ملازمین۔ان میں سویلین اور فوجی اہلکار دونوں شامل ہیں۔

۔ بیرون ملک سعودی سفارت خانوں اور قونصل خانوں میں خدمات انجام دینے والے ملازمین۔ان کے علاوہ مختلف اتاشی،علاقائی اور بین الاقوامی تنظیموں میں خدمات انجام دینے والے ملازمین کو بھی بیرون ملک جانے کی اجازت ہوگی۔

(جاری ہے)

۔ سعودی عرب سے باہر سرکاری ، نجی یا غیر منافع بخش اداروں کے مستقل ملازمین۔ نیز سعودی عرب سے باہر تجارتی اداروں یا کمپنیوں میں ملازمت کرنے والے سعودی شہریوں کو بیرون ملک جانے اور وہاں سے واپس آنے کی اجازت ہوگی۔
۔ ایسے کاروباری افراد جن کا اپنے تجارتی یا صنعتی کاروباروں یا برآمدات کے سلسلے میں بیرون ملک جانا ناگزیرہو۔مارکیٹنگ اور سیلز مینجر،جنھیں اپنے گاہکوں یا صارفین سے ملاقات کے سلسلے میں جانے کی ضرورت ہو۔
۔ ایسے مریض جنھیں علاج کی غرض سے بیرون ملک جانے کی ضرورت ہو۔بالخصوص سرطان اور جسمانی اعضاء کی پیوندکاری کے خواہاں مریض۔مگر انھیں صرف ان کی میڈیکل رپورٹس کی بنیاد پر بیرون ملک جانے کی اجازت دی جائے گی۔
۔ وظائف پر بیرون ملک تعلیم حاصل کرنے کے لیے جانے والے طلبہ ، اپنی ٹیوشن فیس ادا کرنے والے طلبہ ، میڈیکل فیلوشپ پروگراموں کے ٹرینی، جنھیں طب کی تربیت کے لیے بیرون ملک جانے کی ضرورت ہو۔ اس استثناء میں طلبہ کے ساتھی بھی شامل ہیں۔

انسانی بنیاد پر دو طرح کے کیسوں کو بیرون ملک جانے کی اجازت ہوگی:

1۔ کسی شہری کا بیرون ملک مقیم اپنے خاندان سے ملاپ کے لیے جانا۔

2۔ کسی فرد کو بیرون ملک اپنے خاوند ، بیوی ، والد یا والدہ یا بچے کی وفات پر سعودی عرب سے بین الاقوامی سفر کی اجازت ہوگی۔
ایسے شہری یا ان کے ساتھی جو بیرون ملک رہتے ہیں ، وہ اگر بیرون ملک اپنے قیام کا دستاویزی ثبوت فراہم کردیں تو انھیں سعودی عرب سے باہر جانے کی اجازت ہوگی۔

علاقائی اور بین الاقوامی سطح پر کھیلوں کے مقابلوں میں حصہ لینے کے خواہاں کھلاڑیوں کے علاوہ ان کے ساتھ ٹیکنیکل اورانتظامی عملہ کو جانے کی اجازت ہوگی۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More