The Pakistan Post
Daily News Publishing Portal

زمبابوے کیخلاف سیریز پی سی بی کیلئے آزمائش ثابت ہونیکا امکان … آنیوالی سیریزوں کیلئے 2 اہم سوالوں کا جواب دینے کا چیلنج درپیش،ثابت کرنا ہوگا کہ مہمان ٹیموں کو مناسب سکیورٹی … مزید

13

لاہور،کراچی (اردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار ۔ 15 ستمبر 2020ء ) آئندہ ماہ شیڈول زمبابوے کیخلاف مختصر فارمیٹ کے میچوں کی سیریز مستقبل کے اعتبار سے پاکستان کرکٹ بورڈ کیلئے بڑی آزمائش ثابت ہو سکتی ہے کیونکہ اس دوران کھیلے جانیوالے ون ڈے اور ٹی ٹونٹی میچوں کے دوران اسے آنیوالی سیریزوں کیلئے 2 اہم ترین سوالات کا جواب دینے کا چیلنج درپیش ہے ،ثابت کرنا ہوگا کہ مہمان ٹیموں کو مناسب سکیورٹی فراہم کرنیکی اہلیت موجود ہے جبکہ کورونا وائرس سے پاک ماحول بھی یقینی بنانے کی ضرورت ہوگی جس کیلئے انگلینڈ اینڈ ویلز کرکٹ بورڈ سے بائیو سکیور ایریا سے متعلق ہدایات و مشورے بھی لئے جائیںگے ۔تفصیلات کے مطابق 20 اکتوبر کو پاکستان پہنچنے والی زمبابوین ٹیم کیخلاف سیریز کا آغاز آئندہ ماہ کے اختتامی ہفتے میں ہوگا جسکے بند دروازوں میں کھیلے جانیوالے میچز کیلئے پی سی بی نے بائیو سکیور ایریا کی تخلیق کیلئے کام شروع کردیا ہے جس کیلئے انگلینڈ اینڈ ویلز کرکٹ بورڈ سے بھی ہدایات اور مشورے لئے جائیںگے ۔

(جاری ہے)

پی سی بی نے اس حوالے سے جوممکنہ شیڈول جاری کیا ہے اس کے مطابق ون ڈے میچز ملتان جبکہ ٹی ٹونٹی میچز راولپنڈی میں کھیلے جائیںگے جس کیلئے تیاریاں شروع ہو گئی ہیں تاہم پی سی بی کو مستقبل کے حوالے سے کڑی آزمائش کا سامنا ہے کیونکہ آئندہ 20 ماہ کے عرصے میں آسٹریلیا،نیوزی لینڈ اور انگلینڈ کے پاکستان ٹورز کی توقع کی جا رہی ہے جبکہ ایف ٹی پی کے تحت جنوری2021ء میں جنوبی افریقہ کی ٹیم کی پاکستان آمد بھی متوقع ہے اور اس اعتبار سے دیکھا جائے تو زمبابوے کیخلاف پاکستان میں کھیلے جانیوالے میچز پی سی بی کیلئے ٹیسٹ کیس کا درجہ اختیار کرگئے ہیں جن کے دوران کم از کم دو اہم سوالات کا مناسب جواب سامنے لاتے ہوئے اسے ثابت کرنا ہوگا کہ مہمان ٹیموں کو مناسب سکیورٹی فراہم کی جا سکتی ہے جبکہ اس کے ساتھ ہی موجودہ حالات کے تناظر میں کورونا وائرس سے پاک ماحول بھی یقینی بنانے کی ضرورت ہوگی تاکہ پاکستان آنیوالی ٹیمیں خدشات سے پاک دورے کیلئے اپنا ذہن بنا لیں۔

جنوبی افریقہ کیخلاف پی سی بی حکام مکمل اور بڑی سیریز کھیلنے کی خواہش رکھتے تھے مگر ایف ٹی پی کی شدید مصروفیات کی وجہ سے اب مختصر سیریز پر اکتفا کرنا ہوگا مگر 13 سال کے طویل عرصے کے بعد پاکستان آنے والی ٹیم کیلئے کورونا وائرس کی مشکل صورتحال میں محفوظ ماحول کی فراہمی سب سے بڑا اور اہم چیلنج ہوگی کیونکہ عام حالات میں پی سی بی نے ورلڈ الیون،ویسٹ انڈیز، سری لنکا اور بنگلہ دیش کے علاوہ پی ایس ایل کے میچوں کی بھی کامیابی کیساتھ میزبانی کی تھی اور سکیورٹی کے اعتبار سے کوئی کمزوری سامنے نہیں آئی تھی۔30 ستمبر سے شروع ہونیوالے ڈومیسٹک سیزن کے میچز بھی بائیو سکیور ماحول میں مکمل حفاظتی انتظامات کے ساتھ کھیلے جائیں گے جسکے بعد زمبابوے کیخلاف سیریز اس بات کا تعین کردیگی کہ مستقبل میں پاکستان آنیوالی ٹیمیں سکیورٹی اور کورونا وائرس سے پاک ماحول کے حوالے سے کتنی مطمئن ہیں اور یہی وجہ ہے کہ پی سی بی حکام اس بات پر زور دے رہے ہیں کہ موجودہ حالات کے تحت میچوں کا بہترین انداز سے انعقاد ممکن بنایا جائے ۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More