The Pakistan Post
Daily News Publishing Portal

خیبر پختونخوا فوڈ اتھارٹی کی ایبٹ آباد اور نتھیاگلی میں اشیائے خوردونوش کی چیکنگ، تیرہ سو لیٹر مضر صحت دودھ تلف … متعدد بیکریوں کے پروڈکشن یونٹس سیل، نتھیا گلی بازار … مزید

18

متعدد بیکریوں کے پروڈکشن یونٹس سیل، نتھیا گلی بازار میں سیاحوں کی شکایت پر تین ریسٹورنٹس کو تالے

اتوار اکتوبر
19:25

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین – این این آئی۔ 18 اکتوبر2020ء) خیبرپختونخوا فوڈ سیفٹی اینڈ حلال فوڈ اتھارٹی نے اتوار کو عوامی شکایات سیل پر ملنے والی شکایات پر کاروائی کرتے ہوئے ایبٹ آباد اور نتھیا گلی میں اشیائے خوردونوش کی چیکنگ کی۔ ڈائریکٹر جنرل کے پی فوڈ تھارٹی سہیل خان کے مطابق اشیائے خوردونوش سے متعلق تمام کمپلینٹس پر بروقت کاروائی عمل میں لائی جاتی ہے اور اس بارے کسی قسم کی کوتاہی برداشت نہیں کی جائیگی۔ ڈائریکٹر آپریشنز ڈاکٹر عظمت وزیر کے مطابق عوام اشیائے خوردونوش سے متعلق تمام شکایات، فوڈ اتھارٹی موبائل ایپ، فیس بک پیج کے علاوہ ٹوئیٹر پر بھی درج کرسکتے ہیں جبکہ وٹس ایپ اور یونیورسل ایکسس نمبر پر ٹال فری کال کی سہولت بھی فراہم کی جارہی ہے۔

(جاری ہے)

ڈپٹی ڈائریکٹر فوڈ سیفٹی اینڈ حلال فوڈ اتھارٹی ایبٹ آباد ارشد عباسی نے آپریشن کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ عوامی کمپلینٹ سیل پر ملنے والی شکایات پر کاروائی کیلئے اسسٹنٹ ڈائریکٹر انیلہ محبوب کے ہمراہ فوڈ سیفٹی آفیسرز شفیق احمد اور فرح عباسی نے حویلیاں،قلندر آباد،نتیھاگلی بازار اور ایبٹ اباد بازار میں مختلف ریسٹورنٹس ،جنرل سٹورز،کباب شاپس، ملک شاپس، بیکریز، گوشت اور چکن شاپس کا معا ئنہ کیا۔

دودھ کا موقع پر تجزیہ کیا گیا اور ملاوٹ پر تیرہ سو لیٹر مضر صحت دودھ تلف کردیا گیا۔ حویلیاں بازار میں صفائی کی ابتر صورتحال پر متعدد بیکریوں کے پروڈکشن یونٹس کو سیل کردیا گیا جبکہ پرُفضا مقام نتھیاگلی میں سیاحوں کی شکایات پر تین ریسٹورنٹس کیخلاف ٹیم نے کاروائی کرتے ہوئے سیل کردیا۔اشیائے خوردونوش کی چیکنگ کے دوران چار سو کلوگرام مس لیبل، ممنوعہ و ایکسپائرڈ اشیا بھی تلف کی گئیں۔ حفظان صحت کے اصولوں کے متعلق مختلف بازاروں میں اشیائے خوردنوش سے وابستہ افراد کو آگاہی بھی دی گئی۔

متعلقہ عنوان :

Leave A Reply

Your email address will not be published.

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More