The Pakistan Post
Daily News Publishing Portal

اسلام آباد ہائیکورٹ نے رحمان ملک کی سنتھیارچی کی درخواست پر کارروائی رکوانے کی درخواست نمٹا دی

47

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین – اے پی پی۔ 14 ستمبر2020ء) اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے سابق وزیر داخلہ رحمان ملک کی ماتحت عدالت میں سنتھیارچی کی درخواست پر کارروائی رکوانے کی درخواست ضروری ہدایات کے ساتھ نمٹا دی ہے۔ پیر کو سماعت کے موقع پر پی پی پی کے رہنماء سینٹر رحمان ملک کی جانب سے سینیئر وکیل عرفان قادر عدالت کے سامنے پیش ہوئے۔ عرفان قادر نے عدالت کو بتایا کہ عدالت نے رحمان ملک کے خلاف مقدمہ درج کرنے کی درخواست ماتحت عدالت کو دوبارہ سننے کا حکم دیا جس پر چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دیئے کہ ہم نے اس میں ایف آئی آر درج کرنے کی کوئی ہدایت نہیں کی، اس حوالے سے کوئی ابزرویشن نہیں دینا چاہتے جو ماتحت عدالت کی کارروائی متاثر کرے جس پر وکیل صفائی نے عدالت کو بتایا کہ جب دوسرے جج کو آپ نے کیس بھیج دیا اس کا مطلب ہے کہ پہلے کے فیصلے کو مسترد کردیا گیا ،جس پر عدالت نے ریمارکس دیئے کہ یہ سیریس نوعیت کے الزامات لگائے گئے ہیں، یہ تو رحمان ملک کو کہنا چاہیے کہ وہ اس حوالے سے مکمل تحقیقات کرانا چاہتے ہیں، اس عدالت نے اپنے فیصلے میں صرف سپریم کورٹ کے ایک فیصلے کا حوالہ دیا ہے، ہو سکتا ہے پورا کیس ہی بے بنیاد الزامات پر مبنی ہو۔

(جاری ہے)

اگر الزامات بے بنیاد ہوں گے تو اس کے بھی اپنے اثرات ہوں گے جس پر عرفان قادر نے عدالت سے اتفاق کرتے ہوئے بتایا کہ آپ بالکل درست بات کر رہے ہیں کہ اس کی تحقیقات ہونی چاہئیں، اس موقع پر رحمان ملک نے عدالت سے کچھ کہنے کی اجازت طلب کی تو عدالت نے انھیں کہا کہ جو کچھ بھی کہنا ہے پیچھے بیٹھ کر اپنے وکیل کے ذریعے کہیں۔ وکیل صفائی نے عدالت کو بتایا کہ جو درخواست یہاں زیر سماعت ہے اس کے حقائق عدالت کو درست بیان نہیں کئے گئے، کیس کے حوالے سے حقائق چھپا کر عدالت کو گمراہ کیا گیا۔ٹی وی پروگرامز میں انٹرویو کے دوران الزامات بھی مختلف لگائے گئے، سنتھیا رچی نے 28 مئی کو سابق وزیراعظم محترمہ بینظیر بھٹو کے خلاف ٹویٹ پر الزامات لگائے ،29 مئی کو چیرمین سینٹ اور سٹینڈنگ کمیٹی نے اسکا نوٹس لیا۔سٹینڈنگ کمیٹی کے نوٹس کے بعد پیپلز پارٹی کے تین اہم رہنماؤں پر ریپ کا الزام لگایا گیا۔امریکی خاتون سنتھیارچی کے اپنی تمام انٹرویو میں تضاد ہیں۔ اس موقع پر عدالت نے ریمارکس دیئے کہ اس کیس پر فئر ٹرائل اور شفاف تحقیقات ہونی چاہیے، قانون نے ایک طریقہ کار وضع کیا ہے اور ہم نے اس طریقہ کار پر ہی چلنا ہے، آپ بڑے اور قابل عزت سیاست دان ہیں مگر یہ عدالت دونوں سائیڈ کے میرٹ اس اسٹیج پر نہیں سنے گی، الزامات درست ہیں یا نہیں دونوں صورتوں میں قانون اپنا رستہ لے گا۔ عدالت نے جو ابزرویشن دی تھی ماتحت عدالت اس کو دیکھے بغیر فیصلہ کرے ماتحت عدالت کسی قسم کا تاثر لئے بغیر فیصلہ کرے ۔ عدالت نے رحمان ملک کی درخواست نمٹا دی۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More