The Pakistan Post
Daily News Publishing Portal

اسلام اور پاکستان کا دفاع مقدم ہے بیرونی قوتوں کا مقابلہ کیا جائیگا،مولانا حامد الحق حقانی … ناموس صحابہ واہل بیت کیلئے جدوجہد کی مکمل حمایت کرتے ہیں،خواتین پر جنسی … مزید

14

ملتان(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین – این این آئی۔ 13 ستمبر2020ء) جمعیت علما اسلام (س) کی مرکزی مجلس عاملہ کا اجلاس مرکزی امیر مولانا حامد الحق حقانی کی صدارت میں منعقد ہوا، جس میں بین الاقوامی اور ملکی سیاسی و دینی صورت حال پر طویل غور و خوض کیا گیا۔ اجلاس میں جمعیت کی مرکزی مجلس عاملہ کے اراکین اور چاروں صوبوں سے امراء و نظماء عمومی نے شرکت کی اجلاس میں ملک میں جرائم کی بڑھتی ہوئی صورتحال بالخصوص جنسی درندگی کے واقعات پر انتہائی تشویش کا اظہار کرتے ہوئے حکومت سے مطالبہ کیا گیا کہ قتل و غارت گری، رہزنی، جنسی درندگی اور دیگر جرائم پر قابو پانے کے لیے فی الفور شرعی قوانین کا نفاذ عمل میں لایا جائے، مولانا حامد الحق حقانی نے کہا کہ نفاذ شریعت جمعیت کی منزل ہے اور مولانا سمیع الحق شہیدؒ کا مشن جاری رکھنے کا عزم کرتے ہیں، اجلاس سے جمعیت علما اسلام سیکرٹری جنرل مولانا عبدالروف فاروقی ،مرکزی نائب امیر شیخ الحدیث مفتی حبیب الرحمن درخواستی، مولانا بشیر احمد شاد ،مولانا فہیم الحسن تھانوی، مولانا یوسف شاہ ،مولانا عبدالقدوس نقشبندی ،مولانا عبدالخالق ہزاروی ،قاری عتیق الرحمان ،مولانا عبدالصمد درخواستی،قاری سعید اور رحیمی نے خطاب کیا۔

(جاری ہے)

اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے مولانا عبدالروف فاروقی نے کہا کہ صحابہ کرام و اہل بیت عظام کے خلاف حالیہ دنوں میں ایک مکتبہ فکر کی طرف سے بدزبانی اور توہین کے واقعات پر غم و غصے کا اظہار کرتے ہوئے اہل سنت کی طرف سے تحفظ ناموس صحابہ و اہل بیت کے لیے جاری جدوجہد کی مکمل حمایت کا اعلان کیا گیا اور جمعیت کی طرف سے مطالبہ کیا گیا کہ صحابہ کرام کی توہین کرنے والے عناصر کو دہشتگرد غیر ملکی ایجنٹ قرار دے کر قرار واقعی سزا دی جائے، جمعیت کا مطالبہ ہے کہ پنجاب اسمبلی میں پاس ہونے والے تحفظ بنیاد اسلام بل کو جلد از جلد قانونی شکل دے کر نافذ کیا جائے اور اس طرح کی مذہبی دہشت گردی کا سدباب کرنے کیلئے سخت قوانین ملکی سطح پر پارلیمنٹ میں منظور کروائے جائیں، مولانا حامد الحق حقانی کہا کہ جمعیت سمجھتی ہے کہ ملک میں فرقہ واریت اور انا رکی پیدا کرنا ،اسرائیل ،ایران ،بھارت اور دیگر پاکستان دشمن قوتوں کا ایجنڈا ہے، تمام محب وطن قوتیں اور اسلامی تنظیمیں متحد ہوکر اس کوشش کو ناکام بنائیں گی، اجلاس میں جمعیت علما اسلام کو منظم اور متحرک کرنے کے لیے ہر سطح پر تنظیم سازی کا فیصلہ کرتے ہوئے تمام دینی قوتوں کو ایک پلیٹ فارم پر متحد کرنے کے عزم کا اظہار کیا گیا، اس سلسلے میں فیصلہ کیا گیا کہ مرکزی قائدین تمام صوبوں کا دورہ کرکے جمعیت کو اس ملک کی بڑی سیاسی قوت بنانے میں اپنا کردار ادا کریں گے، اجلاس میں ایک قرارداد کے ذریعے برطانوی پارلیمنٹ کی طرف سے قادیانیوں کو مظلوم قرار دینے والی کوشش کو مسترد کرتے ہوئے حکومت اور بالخصوص وزارت خارجہ اور ارکان پارلیمنٹ سے مطالبہ کیا گیا کہ برطانوی پارلیمنٹ کے متعلقہ قرارداد کو مسترد کرتے ہوئے اسلام اور عقیدہ ختم نبوت کی حفاظت کے لیے دو ٹوک اور واضح موقف کا اعلان کیا جائے، اجلاس میں قرار دیا گیا کہ برطانوی پارلیمنٹ کی قرارداد پاکستان کے اندرونی معاملات میں مداخلت اور قادیانیوں کے ذریعے خانہ جنگی پیدا کرنے کی کوشش ہے، حکومت اپنا کردار ادا کرے ،اجلاس میں ملک میں بے روزگاری، مہنگائی اور ذخیرہ اندوزی پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے عدالت عظمیٰ (چیف جسٹس) اور چیف آف آرمی سٹاف سے اپیل کی کہ حکومت کی گوش کریں اور عام آدمی پر ناقابل برداشت بوجھ کو کم کرنے میں اپنا کردار ادا کریں، جمعیت علما اسلام کی مرکزی مجلس عاملہ کے اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ نومبر کے مہینے میں شہید ناموس رسالت مولانا سمیع الحق کی دینی سیاسی پارلیمانی خدمات کو خراج تحسین پیش کرنے کے لیے سیمینار منعقد کئے جائیں گے،اور مولانا کے مشن کو جاری رکھنے کے لئے تجدید عہد کے طور پر نومبر کے مہینے کو منایا جائے گا، اجلاس میں انتظامی اعتبار سے جنوبی پنجاب کے لئے الگ صوبہ بنائے جانے کی حمایت کی اور مطالبات کیا گیا کہ ملتان اور بہاولپور میں مختلف محکموں کی تقسیم کی جائے، ایک ہی مقام پر تمام محکموں کے دفاتر قائم کیے جائیں اور عوام کی مشکلات کو حل کرنے کیلئے دانشمندانہ حکمت عملی طے کی جائے، اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ ملک بھر میں ہر سطح پر تحفظ ناموس رسالت اور تحفظ ناموس صحابہ و اہل بیت کے عنوان پر سیمینار اور ریلیاں منعقد کی جائے گی، اس سلسلے میں جمعیت نے تمام ذیلی تنظیموں کو ہدایت کی کہ اہل سنت مکاتب فکر کو یکجا کرکے ریلیوں کا اہتمام کیا جائے اور مجلس تحفظ ناموس صحابہ و اہل بیت کے مطالبات کا اعادہ کیا جائے۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More